مرجع عالی قدر اقای سید علی حسینی سیستانی کے دفتر کی رسمی سائٹ

مرجع عاليقدر آيت الله سيستاني (دام ظله) كے دفتر كے ايك مسئول نے تصریح كيا ہے کہ:
گذشتہ شب معظم لہ كا باياں پير لغزش كها گيا جس كی وجہ سے آپ كے ران كي ہڈی ٹوٹ گئی ہے۔
انشاالله آج عراقی ڈاکٹروں کے ذريعہ آپ کا آپریشن ہوگا۔
مومنين سے معظم لہ کی شفایابی کے لیے دعا كی گزارش ہے۔

فتووں کی کتابیں » توضیح المسائل جامع

مبطل نہم: فعل کثیر اور ایسے کام کا انجام دینا جو نماز کی شکل خراب کر دے ← → مبطل ہفتم: جان بوجھ کر ہنسنا (قہقہہ)

مبطل ہشتم: دنیوی کام کے لیے جان بوجھ کر رونا

مسئلہ 1384: اگر نماز گزار جان بوجھ کر اپنے اختیار سے آواز کے ساتھ یا بغیر آواز کے دنیوی امور کے لیے یا کسی میت کی یاد میں گریہ کرے تو احتیاط واجب کی بنا پر اس کی نماز باطل ہے۔

مسئلہ 1385: اگر نماز گزار بے اختیار گریہ کرے اس طرح سے کہ گریہ اس پر غالب آجائے اور خود کو روک نہ سکے چنانچہ اس کے مقدمات اختیاری ہوں تو جان بوجھ کر گریہ کرنے کا حکم رکھتا ہے یعنی احتیاط واجب کی بنا پر اس کی نماز باطل ہے اور بلکہ اگر مقدمات بھی اختیاری نہ ہوں چنانچہ اگر دوبارہ نماز پڑھنے کے لیے وقت باقی ہو اور وہ شخص بغیر گریہ کے نماز پڑھ سکتا ہو تو احتیاط لازم کی بنا پر لازم ہے نماز کو دوبارہ پڑھے، چنانچہ وقت نہ ہو تو اس کی نماز صحیح ہے۔

مسئلہ 1386: اگر نماز گزار پر گریہ اس طرح سے غالب آجائے کہ خود کو نہ روك سکتا ہو اور تمام وقت میں گریہ کے بغیر نماز نہ پڑھ سکتا ہو۔ گرچہ نماز میں صرف واجبات کے انجام دینے پراکتفا کرنے کے ذریعے۔ تو اس صورت میں نماز کو اسی حالت میں پڑھے صحیح ہے۔

مسئلہ 1387: اگر نماز گزار خداوند متعال کے خوف یا اس سے محبت یا آخرت کے لیے گریہ کرے، آہستہ ہو یا بلند حرج نہیں ہے بلکہ عبادت کے بہترین اعمال میں سے شمار ہوگا ۔

مسئلہ 1388: اگر نماز گزار دعا کی جگہ پردنیوی حاجت کو طلب کرنے کے لیے خداوند متعال کی بارگاہ میں تذلّل (بے چارگی، انكساری) اور تواضع کی نیت سے گریہ کرے اور اپنی حاجت اس سے مانگے تو حرج نہیں ہے اس کی نماز صحیح ہے ۔[138]

مسئلہ 1389: سید الشہدا ابا عبد اللہ الحسین علیہ السلام اور تمام ائمہ علیہم السلام کے مصائب پر گریہ کرنا قصد قربت اور خدا کی بارگاہ میں قریب ہونے کی نیت سے حرج نہیں رکھتا۔

[138] مثال کے طور پر اگر نماز گزار نماز کے قنوت میں دنیوی کام کے لیے مثلاً بیمار کی شفا یا تنگدستی دور كرنے كے لیے دعا کرے اور اس حال میں خداوند متعال کی بارگاہ میں اپنی بے چارگی کے ظاہر کرنے اور تواضع کرنے کی نیت سے گریہ کرے تو حرج نہیں ہے اور نماز باطل نہیں ہوگی۔
مبطل نہم: فعل کثیر اور ایسے کام کا انجام دینا جو نماز کی شکل خراب کر دے ← → مبطل ہفتم: جان بوجھ کر ہنسنا (قہقہہ)
العربية فارسی اردو English Azərbaycan Türkçe Français