مرجع عالی قدر اقای سید علی حسینی سیستانی کے دفتر کی رسمی سائٹ

فتووں کی کتابیں » توضیح المسائل جامع

نماز گزار سے اذان ساقط ہونے کے مقامات ← → اذان و اقامت سے مربوط شرائط

نویں شرط: نماز کا وقت داخل ہو چکا ہو

مسئلہ 1103: اذان و اقامت نماز کا وقت داخل ہونے کے بعد کہنی چاہییے لہٰذا اگر جان بوجھ کر یا بھول کر وقت سے پہلے کہے تو باطل ہے مگر اس صورت میں جب دوران وقت داخل ہو جائے تواس صورت میں نماز صحیح ہے جیسا کہ مسئلہ 1418 میں بیان کیا جائے گا۔

دسویں شرط: اقامت کھڑے ہوکر کہے

مسئلہ 1104: اقامت کے صحیح ہونے کے لیے ضروری ہے کہ امکان کی صورت میں کھڑے ہو کر کہی جائے لیکن اذان کہتے وقت کھڑے ہونے کی رعایت کرنا مستحب ہے۔

گیارہویں شرط: اقامت احتیاط واجب کی بنا پر طہارت کے ساتھ کہے

مسئلہ 1105: انسان کو چاہیے کہ اقامت کہتے وقت احتیاط واجب كی بنا پر غسل وضو یا تیمم (جو اس کا وظیفہ ہو) كیےہو لیکن اذان میں اس نکتے کی رعایت مستحب ہے۔

بارہویں شرط: اذان و اقامت غنا کی شکل میں نہ کہی جائے

مسئلہ 1106: اگر اذان و اقامت میں آواز کو گلے میں اس طرح گھمائے کہ غنا شمار ہو یعنی گانے بجانے کی بزموں کے انداز میں جیسا معمول ہے اس انداز میں اذان و اقامت کہے تو حرام ہے اور اگر غنا نہ ہو تو مکروہ ہے۔
نماز گزار سے اذان ساقط ہونے کے مقامات ← → اذان و اقامت سے مربوط شرائط
العربية فارسی اردو English Azərbaycan Türkçe Français